duaen 371

لا حول ولا قوة إلا بالله

نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اس لئے کہ آپ رحمت اللعالمین (رحمت عالمین) تھے ، اپنے صحابہ سے فرمایا:
“میں تمہیں جنت کے خزانوں کا خزانہ دوں گا ، یہ کہو ، لا حول ولا قوات إلى بالله العظيم (اللہ کے ساتھ کوئی طاقت میں برابر نہیں ہے ، [تقدیر والا]] . ”
سیدنا محمد ، اس ذکر سے
‘آپ کو طاقت ملے گی یہ آپ کو براّی سے پاک کردے گا۔ دوسرے لفظوں میں ، اپ کو اگربیماری پریشان کرتی ہے تو یی عمل اپ کے لیے بہتر ھے.
تقدیر آپ کے ہاتھ میں نہیں ہے لہذا جب آپ اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ آپ بے اختیار ہیں اور تمام معاملات اللہ کے ہاتھ میں ہیں تو ، انسان اللہ کی طرف لوٹ آتا ہے ، جو معاملات کا بہترین حل کرنے والا ہے!
جب بھی آپ غمگین ، افسردہ ، دباؤ یا ناخوش محسوس کرتے ہو ، اس عمل کو دہرائیں
سبحان اللہ ، آپ اپنی آنکھوں کے سامنے واقعی دیکھ سکتے ہیں ، اس کی تلاوت کرنے والے شخص کی طرف سے ، دباؤ اور اداسی کو دور کیا جا تا ہے۔

اس کی علامت یہ ہے کہ یہ کام کر رہا ہے ، وہ شخص گہری سانس لے گا (راحت کی سانس) اسی لمحے اللہ نے مشکلوں کا وزن کندھوں سے اٹھا لیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں